0

‘پاکستان میں صرف کرکٹرز کو پوچھا جاتا ہے دیگر کھلاڑیوں کو نہیں,فاطمہ حسین

وکیو اولمپکس میں پاکستان کے جویلین تھرور ارشد ندیم کی شاندار پرفارمنس اور اس پر ملنے والی پذیرائی کے بعد اس کھیل سے وابستہ ایتھلیٹس کو اُمید ہوچلی ہے کہ پاکستان میں جویلین تھرو کو بھی توجہ ملے گی۔

قومی ویمن چیمپئن فاطمہ حسین کہتی ہیں کہ اگر تھرورز کو سہولیات ملے تو پانچویں نہیں بلکہ  میڈل پوزیشن حاصل ہوگی۔

پاکستانی ایتھلیٹ ارشد ندیم نے وہ کارنامہ انجام دیا جو آج تک کسی پاکستانی نے نہیں انجام دیا، وہ نہ صرف ایتھلیٹکس میں براہ راست کوالیفائی کرنے والے پہلے پاکستانی بنے بلکہ ساتھ ساتھ فائنل میں پانچویں پوزیشن بھی حاصل کی۔ 

ارشد کی کارکردگی کو پورے ملک نے سراہا جس کے بعد دیگر ایتھلیٹس کو اُمید ہے کہ ملک میں جویلین تھرو کے کھیل کو سنجیدہ لیا جائے گا۔

خواتین میں پاکستان کی ٹاپ جویلین تھروور نے کہا کہ اس وقت ان کی تھرو 44 میٹر کے لگ بھگ ہے جبکہ عالمی معیار60 میٹر کا ہے —فوٹو:جیو نیوز
خواتین میں پاکستان کی ٹاپ جویلین تھروور نے کہا کہ اس وقت ان کی تھرو 44 میٹر کے لگ بھگ ہے جبکہ عالمی معیار60 میٹر کا ہے —فوٹو:جیو نیوز

فیصل آباد میں ٹریننگ کرتی قومی ویمن چیمپئن فاطمہ حسین بھی ان ایتھلیٹس میں سے ہیں جو سمجھتی ہیں کہ ارشد ندیم کے کارنامے کے بعد جویلین تھرو کو بھی توجہ ملے گی۔

فاطمہ حسین کہتی ہیں کہ پاکستان میں صرف کرکٹرز کو پوچھا جاتا ہے دیگر کھلاڑیوں کو نہیں اگر ایتھلیٹکس کو توجہ ، ٹریننگ اور سہولیات ملے تو وہ پانچویں پوزیشن نہیں بلکہ میڈل ٹیبلز پر پوزیشن حاصل کریں۔

فاطمہ کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ایتھلیٹس کو کوئی نہیں پوچھتا، دنیا کے دیگر ملکوں میں مسلسل ٹریننگ کیمپس لگتے ہیں  جبکہ یہاں کیمپس تو دور  پلیئرز کے پاس جوتے تک نہیں ہوتے ، یہ ایتھلیٹس توجہ کے حقدار ہیں۔

ایک سوال پر خواتین میں پاکستان کی ٹاپ جویلین تھروور نے کہا کہ اس وقت ان کی تھرو 44 میٹر کے لگ بھگ ہے جبکہ عالمی معیار60 میٹر کا ہے، وہ بھرپور ٹریننگ کررہی ہیں ، اگر وسائل ملے تو وہ60 میٹر کی تھرو کا ہدف حاصل کرسکتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان کی نظریں اس وقت پاکستان کیلئے اسلامک سالیڈریٹری گیمز اور ساؤتھ ایشین گیمز کی تیاری پر مرکوز ہیں، کوشش ہوگی کہ وہ ان ایونٹس میں پاکستان کیلئے میڈل ضرور حاصل کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں